پاکستانی قادیانیوں کی بڑی تعداد اسرائیلی فوج میں کام کر رہی ہے

2

کیاآپ جانتے ہیں کہ کتنے پاکستانی قادیانی اسرائیلی فوج میں خدمات سرانجام دے رہے ہیں ان قادیانیوں میں کتنی خواتین بھی شامل ہیں۔اور انھوں نے پاکستانی پاسپورٹ رکھنے کے باوجود اسرائیل کی شہریت کیسے حاصل کی ۔ایک اسرائیلی مصنف آئی ٹی نومی نے اپنی کتاب یہودی صحافی اور لکھاری میں ایک پیراگراف ان پاکستانی قادیانیوں کے حوالے سے بھی لکھا ہے جو اسرائیلی فوج میں ملازمت کررہے ہیں۔ وہ لکھتے ہیں کہ 600پاکستانی قادیانی اسرائیلی فوج میں
ملازمت کے فرائض سرانجام دے رہےہیں۔ ان میں 300قادیانی خواتین بھی شامل ہیں۔یہ بھی انکشاف کیا گیا ہے کہ کارگل کی جنگ کے دوران قادیانیوں نے بھارتی فوج کےلئے کروڑوں روپے کے فنڈز جمع کرکے دیے۔واضح رہےکہ قادیانیوں کے پیشوا مرزا غلام احمد قادیانی ملعون کے پوتے مرزا مبارک احمد نے اپنی کتاب آور فارن مشنز میں میں یہودیوں سے تعلقات کا اعتراف کیا تھا۔ اب رہ گیا یہ سوا ل کہ پاکستانی پاسپورٹ پر صاف لکھا ہے کہ یہ پاسپورٹ اسرائیل کے علاوہ تمام ملکوں کےلئے کارآمد ہےتو پھر یہ قادیانی پاکستانی شہریت رکھنے کے باوجود اسرائیل جاتے اور وہاں کی فوج تک میں بھرتی کیسے ہوجاتے ہیں۔تو بہت سارے مغربی ملکوںجیسے کہ برطانیہ، جرمنی، فرانس ،کینیڈا حتیٰ کہ امریکہ نے قادیانیوں کےلئے ویزہ اور شہریت کے قوانین نرمی کی ہوئی ہے۔اس طرح یہ لوگ اپنا قادیانی ہونا ظاہر کرکے بڑی آسانی سے ان ملکوں کا ویزہ حاصل کرکے وہاں پہنچ جاتے ہیں اور پھر وہاں سے اسرائیل سمیت کسی بھی ملک آسانی سے جا سکتے ہیں۔پاکستان میں1973کے آئین میں قادیانیوں کو بلاشک و شبہ غیر مسلم اقلیت قرار دیا گیا ہے۔جس کے بعد قادیانی دنیا بھر میں خود کو مظلوم ظاہر کرکے نہ صرف نام نہاد انسانی حقوق کے علمبرداروں کی ہمدردیاں سمیٹ کر فائدے اٹھاتے ہیں بلکہ یہ اسلام اور پاکستان دشمن سرگرمیوں اور سازشوں کا آلہ کار بننے کےلئے بھی ہمیشہ تیار رہتے ہیں،گزشتہ سال بھی قادیانیوں کا مربی مرزا مسرور امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے پاس پہنچ گیا اور شکایت کی کہ پاکستان میں ہم پرظلم کیے جا رہے ہیں اور ہمیں غیر مسلم قرار دیا گیا ہے اور ہمیںمذہبی آزادی حاصل نہیں ہے وغیر ہ وغیرہ۔اسرائیل ،بھارت اور امریکہ پچھلی کئی دہائیوں سے دنیا کی پہلی اسلامی ایٹمی طاقت پاکستان میں عدم استحکام پھیلانا چاہتے ہیں۔جس کےلئے قادیانی ان کا انتہائی اہم ہتھیار ہیں۔ درحقیقت فتنہ قادیانیت کو پھیلایا ہی اسی سازش کےلئے گیا ہے۔ اس کا مقصد ایک تو ختم نبوت ﷺکو نشانہ بنانےکی ناپاک کوشش کرنا تھا۔دوسرا ایک اقلیت کو مظلومیت کانشان بناکر ایک اکثریت کےخلاف محاذ کھڑا کرنا ،انسانی حقوق اور مذہبی آزادی کے نام پرپاکستان کے اندر اورباہرسازشوں کا بازار گرم کرکے اسے ٹکڑے ٹکڑے کرنے کی کوشش کرنا تھا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.